رسولﷺنے فر مایاکشمش کو رات کو پانی میں بھگو کر رکھو صبح خالی پیٹ پیو

کشمش

انگور مشہور میوہ ہے اسکی بہت سی اقسام ہیں جنگلی پہاڑی سفید کالا سرخ ہیں اصل میں دو رنگ اور دو اقسام کے زیادہ ہوتے ہیں سفید اور سیاہ بہتر وہ ہے جو گرمی کے موسم کا ہو اسکا مزاج پہلے درجے میں گرم تر ہے پکا ہوا انگور جلدی ہضم ہو جاتا ہے غذائیت میں تمام میووں سے

زیادہ عمدہ اور خون پیدا کرنے میں بہترین ہے انگور کے باغات انسان کب سے اُگا رہا ہےاس کا تاریخ میں کوئی نشان تو نہیں ملتا مگر انگور سے بنائی جانے والی وائن کی تاریخ 7000 سال قبل مسیح چین سے ملتی ہے جس سے اندازہ ہوتا ہے کہ اس مفید پھل کو انسان نے شروع میں ہی سمجھ لیا تھا اور اس سے فائدہ حاصل کرنا شروع کر دیا تھا کشمش انسان کی حادثاتی دریافت ہے، کہا جاتا ہے کہ 2000 سال قبل مسیح جو انگور خُشک ہوجاتے تھے اُنہیں پھینک دیا جاتا تھا اور پھر ایک دن کسی نے اس خُشک ہُوئے انگور کو کھایا اور اُسے پتہ چلا کے یہ پھل خُشک ہونے کے بعد اور بھی لذیز ہو جاتا ہے

طبیب حضرات کشمش کے دریافت ہونے کے بعد اس خُشک انگور کی افادیت کو اُسی وقت سمجھ گئے تھے اور اسے بہت سی ادویات میں استعمال کرنا شروع کردیا تھا طب ایوردیک میں خشک انگور یعنی کشمش کو پانی میں رات بھر بھگو کر پینے کی تاریخ بھی کئی ہزار سال پُرانی ہے کشمش کو رات بھر پانی میں بھگونے سے اس کے اندر شامل منرلز نیوٹریشنز اور کشمش کی سکن پانی میں حل ہوجاتی ہےاور نہار منہ پینے سے یہ فوری طور پر پانی کیساتھ ہضم ہوکر اپنا کام شروع کر دیتی ہیں خاص طور پر اس کی اینٹی آکسیڈینٹ خوبیاں جگر کی آلودگی کو صاف کر دیتی ہیں اور آنتوں میں جمی چکنائی اور دیگر آلودگی صاف کرکے خون کی روانی کو تیز کرتی ہیں

کشمش کا پانی ڈائٹری فائبر کو فوری طور پر پینے کے بعد متحرک کرتا ہے اور اسے نہار مُنہ پینے والوں کو صبح سویرے نظام انہضام کی مکمل صفائی حاصل ہوتی ہے اور یہ خون سے فاسد مادوں کو خارج کرکے جسم کے تمام اعضاء کو تقویت دیتا ہے

اپنی رائے کا اظہار کریں